تنقیدی مشاعرہ حافظ محمد الیاس حافظؔ : قلب و جاں بے حد پریشاں! الغیاث

'چھٹا تنقیدی نعتیہ مشاعرہ' میں موضوعات آغاز کردہ از شاہ بابا, ‏مارچ 6, 2017۔

  1. شاہ بابا

    شاہ بابا فضائے نعت میں رہنے سے دل دھڑکتا ہے رکن فروغ نعت

    پیغامات:
    619
    قلب و جاں بے حد پریشاں! الغیاث
    اے پناہِ دین و ایماں! الغیاث

    اپنی کرنوں کا وسیلہ دیجئے
    اے مرے خورشید_ تاباں! الغیاث

    پیش_ ظالم جنبش_ لب ہو عطا
    دم بخود ہے نطق_ انساں! الغیاث

    رفع کیجے بوئے بد باطن مری
    زلف آقا عنبر افشاں! الغیاث

    اختیار_ کل عطا ہیں آپ کو
    دوجہانوں کے اے سلطاں! الغیاث

    لٹ نہ جائے دولت_ ایماں مدد
    تاجدار_ ملک_ ایماں! الغیاث

    تاج کشتی پر لکھا ہے یا رسول!
    مجھ کو کیوں ہو خوف_ طوفاں! الغیاث

    لیجئے اپنی غلامی میں حضور!
    صدقۂ توقیر_ سلماں! الغیاث

    اے حفیظ_ حرمت_ انساں مدد
    اے صدور_ صدر_ گیہاں! الغیاث

    اے نجیب و طیب و طاہر مدد
    میں کہ ہوں آلودہ داماں ! الغیاث

    کھولئے باب_ عطائے ایزدی
    اے مرے سلطان_ دوراں! الغیاث

    ملک_ پاکستان پر بھی اک نظر
    ہو نفاذ_ شرع_ قرآں! الغیاث

    اے حفیظ_ حرمت_ انساں مدد
    اے صدور_ صدر_ گیہاں! الغیاث

    کیجئے گا اپنے حافظؔ پر کرم
    ہو دم_ آخر ثنا خواں! الغیاث

اس صفحے کو مشتہر کریں